Socio Romantic Verses : Ye Azmat Kaisi


Expressions of Anger towards guilty society and some verses of Romance in rhyme scheme
 'AA'  'BA' 'CA'...
By: Mirza Sharafat Hussain Zarafshan

سمجھتے تھےابترامیں وہ  ہم نے  چُرایا اُنہیں،عشق کا پیالا  پِلا کر
اختتا بھی دیکھے تو بے  وفا  نکلے
وہ  ، ہمیں عمر  بھر   رُلا  کر

وہ  بھری عظمت کیسی ، غرور کس کام  کا  ہے  اُس   حُکمران  کا
لوگ    تھوکے   جِسکی   حُکومت   کو ، اُسکی  چوکھٹ    پہ   آکر

وہ   قائد  ہی  جب ناز  کرے  ، تو  پھرے  ننگی  عصمت   لے   کر
خون سے رنگے  ہاتھ  تر ہو  کر ، دھوے  پاپ  گنگا  میں  نہلا  کر

اُنہوں  نے فخر  سے   رہبروں  کو  مارا ،  دے کر  کِس خُدا کا  نادا
اپنی شریعت  بُلا کر چلے تھے  وہ آج  چلے تو  چلےاپنا سر اُٹھا کر

شب  سے لے کر صُبح   تک جو   تپ  رہے تھے  اپنی  غربت  میں
اب خُدا  کا اِنصاف  بھی  دیکھے  تو  دیکھے  وہ  مٹی  میں  مِلا  کر


شاہ  تھے جو  اِک  روز  کے ، غرور تاعت  کا  دیکھا  ہے اُن   میں
ننھوں  کو  سلام  کر  چلے  آج ،  پر دیکھے  نہ کوئ  آنکھ  مِلا  کر

حسرت جِسکے محبت کی ہو، وہ  ملے بھی تو  ملے بڑی  دیر  سے
اب  جو  سنم   اِقرار  محبت  بھی  کرے  ،  تو  کرے  بہت  تڑپا   کر

آو ہم  زبان  ہو کر ، سب شرافت  سے  شرافتؔ کا یہ  ترانہ  گُنگُنائیں
آو  کریں توبہ ہم سب ، اُسکی  بارگاہ میں دونوں 
اپنے دست  اُٹھا کر



samajtey thai abtida mei wo humney churaya unhey ishq ka  pyalapila kar
ikhtita bhi  dekhey  to  bey  wafa   nikley  wo  humey  umar  bhar  rula  kar

wo  bhari   azmat   kaisi   guroor   kis  kaam   ka  hai  us   hukumraan   ka
logh     thookey      jiski     hukumat     ko    uski      chokhat      pa     aakar

wo   qaiid   hi   jab   naaz     karey    to     phirey    nanghi    ismat   ley   kar
khoon   se  rangey  haath  tar  ho kar,  dhoye paap  ganga  me  nehla  kar

unhu  ne   fakhr  se    rehbaru   jo    mara  dey    kar  kis   khuda   ka   nara
apni shariat bhula kar chaley thai wo aj chaley to chaley apna sar utha kar 

shab   se    ley    kar   subuh   tak   jo   tap   rahey   thai   apni   gurbat  mei
ab   khuda   ka  insaaf   bhi   dekhey  to  dekhey   wo   miti   me   mila   kar

shah    thai     jo   aek   roz    ke    guroor   ta.at    ka   dekha   hai    un    me
nanhu   ko  salaam  kar  chaley  aj  par  dekhey   na   koi  aankh   mila  kar

hasrat   jiski   muhabbat   ki  ho   wo  miley  bhi   to   miley   badi   daer   se
ab  jo  sanam  iqraar e muhabbat  bhi  karey  to   karey  bohat   tadpa   kar

aaw  hum  zubaan ho kar  sab sharafat se sharafat ka ye tarana gungunaye
aaw karey   toba   hum sab  uski   bargah   me   donu apney  dast  utha  kar