Udasi : Poem



Udasi is a free metre poem consisting three quatrains of varied rhyme scheme.
By : Mirza Sharafat Hussain Zarafshan


ہوں شام سے میں  روٹھا  ہوا  آج  پھر سے
گھر میں ہوں  بے گھر سا  جانے  کب  سے
ہوں کارواں  سے  چُھوٹا  ہوا  آج  پھر سے
نہیں سُلایا ہے مجھے آج  ماں نے کب  سے

جانے  فضاوٴں  میں یہ اجنبی  مہک کیو ہے
خوشبو بُلاتا ہوں  پاس  تیری  نام سے  میں
مجھ سے وہ  چِھن کے جدا  ہوئی  یوں ہے
آگ دِل کی  بُجھاتا ہُوں  صرف جام سے میں

تھکی ہاری  یادوں  میں اب  رفتار بھی نہیں
  کچھ   الساتی  تو  کچھ  رہتی   خاموش  ہیں
وہ بے وفا ساتھ  چلنے  کو  تیار  بھی  نہیں
کہاں  لیلا   تھی  اور  کہا  وہ  فراموش  ہیں



English Translation :
sulky again today I am from evening
Feeling homeless despite being at home

Again lost from Caravan today
My Mother has not sent me to sleep from a long time

What the strange smell is surrounding me
I bring your fragrance just by calling your name
And she has has been snatched from me
to extinguish the fire in my heart I use to take alcohal


The tiresome nostalgia is getting lazy
few memories are sluggish and few silent
that(lover) faithless is not ready to accompany me 
where that layla  and where you deceitful