Qatil Ke Naam

A poem on separation/changing mood of beloved/enemy in a nice urdu poetic style.

by : Mirza Sharafat Hussain Beigh





   

آج  تیری جبین  پہ   حسرت نہیں ، شکن  کہی ہے
جُدا  دِل  سے میری  جان  کہی   ،   بدن   کہی  ہے


تپتی راہُوں   میں   تیری خاک عشق  کی  نہ ملی
یہی   میری    محبت    پڑی   بے  کفن  کہی   ہے


باہوں  میں  تیری موت کے لگ  جاوٕں   گلے میں
تجھے  دیکھتے  سانسوں  میں  اُٹھتی  گُھٹن ہے


کل   کے   ظالم   نے    دیا    آج     تحفہ ٴ   قاتلانہ
بچنے   کی   نہ   تمنا   نہ   کوئی   کرن   کہی ہے


شرافت کے رخ پہ دیکھوں  ذرا  وہی عادت  پرانی
تیرے خنجر  سے نہ  لہو  کہی  نہ  تھکن کہی یے